اسرائیل ایک ناجائز ریاست تحریر :شیرباز بلوچ


  • ہفتہ
  • 2018-10-27
اسرائیل ایک ناجائز ریاست تھی، ہے اور رہے گی. دنیا اِدھر سے اُدھر ہوسکتی ہے لیکن پاکستان اسرائیل کے درمیان تعلقات کبھی سی صورت بھی قائم نہیں ہوسکتے. اسرائیل نے ہمیشہ سے کوشش کی کہ کسی طرح پاکستان سے تعلقات قائم کرکے خود کو ایک ریاست تسلیم کروا لیں لیکن ایسا نہ ہوسکا. . اسرائیل اب جان چکا ہے کہ پاکستان میں فوج اور حکومت ایک ہوچکے ہیں اور موجودہ حکومت پاکستان کو مشکل وقت سے نکالنے کے لیے سنجیدہ کوششیں کررہی ہے. اس لیے اسرائیل اب براہ راست پاکستان کے خلاف پراپگنڈہ میں کود پڑا. اسرائیل یہ بات اچھی طرح جانتا ہے کہ پاکستان کو چھیڑنا شیر کے منہ میں ہاتھ ڈالنے کے مترادف ہوگا. اس سے پہلے اسرائیل اپنے سارے داؤ پیچ ہار چکا ہے. پاکستان کہوٹہ پر انڈیا کے ساتھ مل کر منصوبہ بندی کی مگر ناکام، انڈیا کو ہر طرح سے پاکستان کے خلاف کیا اور کررہا ہے مگر ناکام، سیاستدانوں اور ایمان فروش ملاؤں کے ذریعہ جمہوریت اور فرقہ واریت کا زہر گھولا، نواز، زردآری اچکزئی، اسفندیار ولی جیسوں کے ذریعے صوبائی تعصب کو ہوا دے کر قوم کے اتحاد کا شیرازہ بکھیرنے کی کوشش کی گئی لیکن ناکام، میڈیا میں اربوں روپے کی سرمایہ کاری کرکے پاکستان کے نظریہ اور اسلام پہ بدترین حملے کیے گئے لیکن ناکام، براہِ راست حملہ نہ کرسکنے کے بعد امریکا کو 50 ملکوں کے ساتھ یہاں بھیجا تاکہ پاکستان کے خلاف پراکسی وار لڑی جائے لیکن ناکام، امریکا نے یہاں خارجی کتوں کو تیار کرکے پاکستان میں بدترین پراکسی وار کا آغاز کیا جس میں تاریخی دہشتگردی کرائی گئی لیکن بفضلِ اللہ پاک فوج نے اسے بھی بدترین شکست سے دوچار کرتے ہوئے ناکام بنادیا، پاکستان کو دنیا میں تنہا کرنے کے خواب لیے امریکہ سے دھمکیاں دلوائی گئیں. ہر جگہ پاکستان مؤقف کے خلاف اقدامات اٹھائے گئے جن میں نواز جیسے خنزیر انسان کی وجہ سے کامیابیاں بھی ملیں لیکن الحمدللہ وقتاً فوقتاً اب وہ بھی دم توڑتی جارہی ہیں. اسرائیلی موساد بھی افگاندیوں کو آگے کرکے لڑاتی ہے،کبھی انڈینز کو اور کبھی ہمارے اپنے خبیثوں کو استعمال کرتا رہا، منظوری خبثین جیسوں کو استعمال کرکے خانہ جنگی کی صورتِ حال پیدا کرنا چاہی، ان ساری باتوں کا مقصد پاک فوج کو الجھائے رکھنا تھا تاکہ فوج ملکی اور بیرونی مسائل سے گھری رہے الحمدللہ پاک فوج نے نہ حوصلے فہم و فراست دشمن کی چالوں کو کاؤنٹر کیا بلکہ ملکی سلامتی کے لیے عظیم اقدامات بھی اٹھائے جس نے عوام کو مزید اپنی افواج کے قریب کردیا. پاکستان میں نئی حکومت کے بعد سے الحمدللہ جو پاکستان میں کچھ تبدیلی کی ایک لہر چلی ان میں دو باتیں انتہائی اہم اور قابلِ ذکر ہے کہ مسلم دنیا میں پاکستان کا کردار ایک بار پھر بہت ابھر کے سامنے آیا ہے مسلم امہ کو متحد کرنے کی خبروں نے بھی دشمنوں کی نیندیں اڑا دی ہیں، دوسری بات کے ناموسِ رسالت اور اسلام کے خلاف ہونے والی سازشوں کا بھی کڑا جواب دیا جارہے ہے. تیسری بات پاکستان کو کرپشن کے ذریعے معذور ریاست بنانے کے عمل میں بھی رکاوٹ آئی ہے اور یہودیوں کا پاکستان کو قرضوں کی دلدل میں دھنسا کر غلام بنانے کا خواب بھی ان شاءاللہ اب ٹوٹ رہا ہے، ایک اور بہترین پیشرفت جس نے آج تک 70 سالوں میں فوج کو الجھائے رکھا وہ تھی ہماری خارجہ پالیسی جسے نواز جیسے لعنتی انسان نے پاکستان کے لیے شجرِ ممنوعہ بنادیا تھا جس کی منافقانہ پالیسز کے سبب دنیا بھر میں پاکستان کو بدترین ذلت اور رسوائی کا سامنا کرنا پڑا، پاکستان کی ہر جگہ جگ ہنسائی ہوئی اگر اسرائیل پاکستان کے تعلقات کسی دورِ حکومت میں بہتر ہوتے تو وہ غدارِ وطن نواز کی حکومت تھی جس کے بچوں کا کاروبار تک یہودیوں سے مشترکہ تھا. لیکن آج الحمدللہ ہماری خارجہ پالیسی پہلے سے کہیں ذیادہ مضبوط اور مؤثر ہے آج ہماری بات کو نہ صرف سنا جاتا ہے بلکہ ان پہ عملدارآمد بھی کیا جانے لگا ہے. اسرائیل جان چکا ہے کہ اس کے ترکش کے سارے تیر آزمائے جاچکے ہیں میرے اللہ نے ہمشیہ اسرائیل اور اسکے حواریوں کا منہ کالا کیا اب اسرائیل براہ راست کے سامنے آنا چاہ رہا ہے اپنے میڈیا کے ذریعے اور اپنی پروپگنڈہ مشین لے کر لیکن ان شاءاللہ جو حال امریکہ کا ہوا اسرائیل کا اس سے کہیں ذیادہ بُرا حال ہوگا. میں نے 2 سال پہلے ایک تحریر میں ذکر کیا تھا کہ اسرائیل 2020 سے پہلے پہلے کسی بھی طرح نیو ورلڈ آرڈر کا قیام چاہتا ہے لیکن پاکستان کے ہوتے ہوئے اسے اپنا یہ خواب پورا ہوتا نظر نہیں آرہا. نیوورلڈ آرڈر ہی دجال کی آمد ہے دجال اور اسکے چیلوں کی طاقت ہے لیکن اس کے راستے میں اگر کوئی رکاوٹ ہے تو پاکستان ہے پاک فوج ہے الحمدللہ.کہا جاتا ہے کہ دجال کسی بات پہ سخت غصہ ہو کے نکلے گا اور مجھے یقین ہے اس غصے کی وجہ بھی اسرائیلی یہودیوں کی پاکستان کے خلاف پہ در پہ ناکامیاں ہوگئیں جو دجالی نظام کے خلاف بڑی رکاوٹ ہیں آنے والے وقتوں میں پراپگنڈہ مزید تیز ہوگا لیکن ان شاءاللہ ہم نے ہر محاذ پہ دشمن کو منہ توڑ جواب دینا ہے اور دجال کے حواریوں کو شکست دینی ہے. رہی بات پاکستان اور اسرائیل کی دوستی کی تو اسلام اور یہودیت کبھی ایک نہیں ہوسکتے. اسرائیل سے دوستی ہی کرنی ہوتی تو ملکی حالات یہ نہ ہوتے ساری دنیا ہمارے خلاف نہ ہوتی، انڈیا امریکہ یہودی ہمارے دشمن نہ ہوتے اور اسرائیل کے قیام کے وقت قائداعظم کا یہ کہنا کہ پاکستان، اسرائیل کو کبھی ایک ریاست تسلیم نہیں کرے گا یہ وہ آخری کیل تھا جو اسرائیل پاکستان تعلقات کے تابوت میں تاقیامت ٹھوک دیا گیا تھا. پاکستان اور اسرائیل دشمن تھے ہیں اور تاقیامت رہیں گے اور اسی پاکستان کے ہاتھوں ان شاءاللہ اسرائیل کا قلع قمع ہونا ہے. اسلام زندہ باد پاکستان زندہ باد پاکستان آرمی زندہ باد پاکستان آئی ایس آئی زندہ باد پاک اسرائیل دشمنی زندہ باد اسرائیل مردہ باد تحریر : شیرباز بلوچ