imageshad.jpg

This Page has 11852viewers.

Today Date is: 10-12-18Today is Monday

ایک اور چراغ بجھ گیا

  • ہفتہ

  • 2018-12-01

ابھی مصلح امت حاجی عبد الوہاب صاحب مرحوم کی جدائی کا رنج اور یادیں نہیں بھولی تھیں کہ ایک اور خبر گرج بن کر آ گری رائیونڈ مرکز شوری کے مرکزی ممبران , حاجی عبد الوہاب مرحوم کے انتہائ قریبی اور معتمد بہ ساتھی شیخ الحدیث امام و خطیب جامع مسجد رائیونڈ مرکز مولانا جمیل صاحب دنیا فانی سے رخصت فرما گئے.. خبر کا سننا تھا کہ جنازہ میں شرکت کو سعادت سمجھتے ہوئے اپنے دوست ائیر فورس کے خطیب مولانا عبداللہ کے ہمراہ رائیونڈ کے لئے عازم سفر ہوئے .ایک بجے کے قریب پندال پہنچے نماز ظہر ادا کی مشورہ میں طے شدہ پروگرام کے مطابق مولانا خورشید صاحب نے بیان فرمایا اور اپنے بیان میں مولانا جمیل صاحب مرحوم کے متعلق فرمایا کہ حضرت ایک زمیندار گھرانے سے تعلق رکھتے تھے آپ نے 1965ء میں حفظ قرآن پاک مکمل کیا اور سن 68ء میں پہلی مرتبہ چار ماہ لگا کر مستقبل میں تبلیغ جیسی عظیم سنت نبوی کو پوری زندگی کرنے کا مسمم ارادہ فرمایا اور پھر 80 کی دہائی سے پوری زندگی کے لیے مرکز میں مقیم ہوئے امیر تبلیغی جماعت حاجی صاحب مرحوم کے اندرون اور بیرون سفر کے خاص رفقاء میں سے تھے .. اپنے مواعظ میں اکثر فکر آخرت کیطرف سامعین کی توجہ مبذول کروایا کرتے تھے. خود بھی اسی پر کار بند تھے اسکی نظیر مولانا کے اس قول سے ملتی ہے جو چند سال قبل اپنےاہل و عیال کو اپنے جواں سالہ بیٹےکی وفات پر تسلی دیتے ہوئےارشاد فرمایا تھا (جبکہ حضرت خود تبلیغی سفر پر اردن میں تھے) جونہی جوان سالہ بیٹے کےسانحہ ارتحال کی اطلاع ملی اللہ کی قضا کو تسلیم کرتے ہوئے فرمایا اے بیٹو وہ جہاں گیا ہے ہم سبھی نے بھی وہی جانا ہے لہذا ہم بھی اپنی تیاری کر کے جائیں. ساری زندگی قال اللہ قال رسول صلی اللہ علیہ وسلم اور آمبیا اکرام علیہ سلام والی مبارک محنت دعوت و تبلیغ میں بسر کی. حدیث مبارکہ کا مفہوم ہے جب اللہ کریم کا پیارا دنیا سے رخصت ہوتا ہے تو جس جس جگہ پر وہ نیک اعمال کرتا تھا وہ جگہیں اسکے جانے پر روتی ہیں. یہاں تو تسبیح کی لڑی ٹوٹ ہوئی نظر آرہی ہے پہلے حاجی صاحب اب مولانا جمیل صاحب اور لندن کی شوریٰ کے امیر حاجی اسحق پٹیل صاحب امیر تبلیغ حاجی عبد الوہاب صاحب مرحوم کی تعزیت کے لیے تشریف لاے ہوئے تھے انکا بھی انتقال ہوا. ایک وقت میں امت کے محسن درد دل رکھنے والے حضرات کی نمازے جنازہ ادا کی گئی، رب کریم آپنے نیک بندے اپنے پاس بلا رہا ہے صالح لوگوں کا وجود امت کے لیے رحمت ہوا کرتا ہے ہمیں اس نعمت کی بقاء کے لیے مجموعی طور پر زیادہ سے زیادہ استغفار کرنا ہوگا.. اس موقع پر یہی کہوں گا ستارے زمیں کے بجھے جارہے ہیں ہمارے اکابر چلے جارہے ہیں چمن میں ویرانی سی پھر چھارہی ہے گلوں کے شگوفے جلے جا رہے ہیں محبت کی راہیں جنہوں نے دکھائیں وہ جنت میں سب ہی بسے جارہےہیں وہ راتوں کولمبی دعا کرنے والے وہ محروم ہم کو کیے جا رہےہیں جو امت کے رہبر جو داعی الی اللہ جمیل اب جہاں سے چلے جارہے ہیں جو دستار_شفقت ہمارے ہیں صفی ہمارے سروں سے اٹھے جارہےہیں اللہ کریم مولانا جمیل صاحب اور تمام امت مرحومہ کو غریق رحمت کروٹ کروٹ راحت نصیب فرمائے آمین تحریر حافظ زاہد مقبول چیچہ وطنی

صحت و تندرستی کے لیے خاص مشورے